بھوک کا عالمی دن 2022: خوراک کی خود مختاری اور موسمیاتی انصاف کی جدوجہد

پریس ریلیز 16 اکتوبر 2022

زراعت اور خوراک کا عالمی ادارہ فاؤ دنیا کی اشرافیہ کے ساتھ ملکر آج خوراک کا عالمی دن منا رہی ہے جبکہ چھوٹے اور بے زمین کسانوں، شہری اور دیہی مزدوروں اور عوام کے لیے یہ بھوک کا عالمی دن ہے۔ پوری دنیا میں بھوک اور قحط کی موجودہ صورتحال عالمگیریت کے بھیانک چہرے کی عکاسی کرتا ہے۔

عالمی سطح پر بھوک کے اعداد و شمار ایک بار پھر بلند ترین سطح پر پہنچ گئے ہیں۔ 2021 میں، دنیا بھر میں تقریباً 2 ارب 30 کروڑ افراد غذائی کمی اور غذائی عدم تحفظ کا شکار ہیں اور تقریباً 83 کروڑ افراد بھوک کا شکار ہیں۔ رپورٹ کے مطابق جولائی 2022 میں 82 ممالک شدید غذائی عدم تحفظ کا شکار ہیں جس سے 34 کروڑ 50 لاکھ افراد متاثر ہو رہے ہیں۔

اس بھوک کو مزید ہوا سامراج کا پیدا کردہ موسمی بحران دے رہا ہے۔ صرف پاکستان میں حالیہ مون سون کی شدید بارشوں کے نتیجے میں 80 لاکھ ایکڑ سے زائد کھڑی فصلیں تباہ ہو چکی ہیں۔ لاکھوں کی تعداد میں مال مویشی، بڑی تعداد میں گندم کا ذخیرہ اور جانوروں کا ذخیرہ شدہ چارہ 8 ہفتوں کے دوران ہونے والی مسلسل بارشوں اور سیلاب کی وجہ سے ضائع ہو گیا ہے۔ واضح رہے کہ پاکستان موسمیاتی تبدیلیوں سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے دس ممالک میں شامل ہے۔ اقوام متحدہ ادارہ برائے انسانی فلاح نے عندیہ دیا ہے کہ تقریباً 57 لاکھ سیلاب زدگان کو اگلے تین ماہ میں خوراک کے سنگین بحران کا سامنا کرنا پڑے گا۔ عالمی ادارہ برائے صحت (ڈبلیو ایچ او) کے مطابق حالیہ سیلاب سے پہلے بھی 16 فیصد آبادی کم یا شدید غذائی کمی اور عدم تحفظ کا شکار تھی۔ Continue reading

Corporate entities, IFIs and neoliberal policies are directly responsible for the hunger, malnourishment and economic destitution

Press Release | PKMT 14th Annual Conference 2021 | October 15-16, 2021

Pakistan Kissan Mazdoor Tehreek held its 14th Annual Conference from October 15 -16 at Renewal Centre, Lahore and simultaneously, held panel discussions and demonstrations to mark International Rural Women’s Day and World Hunger Day. During the events, speakers held corporate entities, IFIs and neoliberal policies accountable for creating food systems that are directly responsible for the hunger, malnourishment and economic destitution of more than a billion.

Azra Sayeed, Roots for Equity exposed corporate hijack of the United Nations Food Systems Summit, highlighting the role of the World Economic Forum, and foundations especially, the Gates Foundation and philanthropies who have provided corporate-driven policies depriving farmers of land, livelihood and food by funding technology intense systems in third world countries; the entire UNFSS was termed as nothing but a hallmark of false solutions to hunger e.g. pre-mixed therapeutic food that accrues billions of dollars in profit for corporations. Wali Haider, PKMT General Secretary highlighted the neoliberal policies in food and agriculture introduced in Pakistan amidst the pandemic reflecting much of the neocolonial policies emitting from the UNFSS. These policies are a fresh wave of attacks on small and landless farmers in Pakistan, embedded in the Pakistan Agricultural Transformation Plan, Kisan Card scheme, CPEC’s agricultural policies and livestock development programs. Policy features of digitalization of the agricultural economy, value chain strengthening and cluster-based food production panders to the corporate lobby, facilitates corporate land grab for export-oriented production, benefits landlords and industrialists and captures natural resources e.g. water, agricultural land, forests and rare minerals for company use. Essentially, it is a blueprint of UNFSS’s vision for food systems transformation and completely overrides small farmers’ rights to land and livelihood.

According to Raja Mujeeb, Steering Committee member, PKMT, the Global People’s Summit, a Global-South counter to the UNFSS main objective was to mobilize landless farmers, agricultural workers, indigenous peoples, fisherfolk and rural women across the world to develop a People’s Action Plan and draw up a Declaration for a people-led radical transformation of the current food regimes towards just, equitable, healthy, and sustainable food systems. The GPS is a testimony of the people’s collective resistance against the global corporate food empire and a call for genuine food systems transformation.

As part of the panel on movements and struggles, Asif Khan, PKMT Steering Committee member, presented an overview and analysis of peoples’ struggles and movements across the world, saying that revolutionary politics and direct action is the only way to grant farmers complete rights overall productive resources and complete autonomy and decision making in food and agriculture.

A number of other activities highlighted Rural Women’s Day with a tribute to rural women for the formal and informal, paid and unpaid work in food and agriculture. PKMT also celebrated 10 years of its struggle for seed sovereignty by holding a seed mela with indigenous seeds from all over Pakistan.

In addition, a protest was held as part of the Global Day of Action against IMF and World Bank Annual Meetings. The protest actions called for an immediate TRIPS waiver, debt cancellation and an end to resource plunder and greenwashing practices in the name of development.

Demands:

  • Implementation of agroecological approaches to agriculture based on food sovereignty principles that center peasants’ right to land and collective rights over all critical productive resources, in order to create just, equitable, healthy and sustainable food systems that ensure safe and nutritious food for all;
  • Recognition of the role that women and rural communities play in conserving plant and animal genetic resources through agricultural practices rooted in traditional knowledge;
  • Boycott all neoliberal corporate-led platforms, policies and action plans such as UNFSS and bilateral and multilateral trade agreements such as the RCEP, CPTPP and others that allow the monopolization of global trade by TNCs;
  • Provide climate justice now by demanding greater accountability and higher compensation for solutions from countries with a higher level of development who have destroyed Earth’s life systems due to extractive and polluting capitalist production model.

Release by: Pakistan Kissan Mazdoor Tehreek (PKMT)

PKMT organises conference on impact of pandemic

SUKKUR: The 13th Annual Conference on “Impact on Peasants and Labourers during the Pandemic” was organised by the Pakistan Kissan Mazdoor Tehreek (PKMT) through video link.

While talking about the national and global impact of Covid-19, Dr Azra Talat Syed, Roots for Equity, said the global capitalist system was responsible for the pandemic. She said they were struggling to fight one pandemic, whereas scientists worldwide are already predicting the outbreak of multiple similar pandemics in the future due to the widespread deforestation caused by capitalist greed. She said the viruses found in animals, residing deep in the forests, have now been spreading among the humans due to capitalist investors relentlessly cutting the forests.

Dr Azra said the pandemic has been used by the monopolist capitalist enterprises to strengthen their exploitative tools to increase their super profits, whereas the workers have been left to grapple with growing hunger, unemployment, disease and multiple other consequences of the pandemic.

She further resolved that at the same time, rich capitalist countries have been successful in using their financial and technological wealth to develop and globally disseminate vaccines for Covid-19, generating immense profits for themselves in the process.

The members from PKMT Sindh, Punjab and Khyber Pakhtunkhwa spoke about the difficulties of small and landless farmers, who have been facing decreasing crop yields and crop destruction due to climate change. They were forced to acquire agricultural inputs at higher prices due to restrictions on mobility and transportation during the pandemic. On the other hand, due to limited and expensive modes of transportation, the farmers were forced to sell their products at extremely low prices. The farmers with production and distribution of perishable food items, like vegetables and milk, were the most affected.

Similarly, women agricultural workers earning daily wages lacked means of transport to go to fields and also fell prey to extortion. The contribution of working women is invaluable in fields, factories, home-based workers and in private and government offices. It is imperative to organise for the rights of women workers in order to ensure the implementation of labour laws and also develop women workers’ consciousness against the capitalist and patriarchal power structures.

https://www.thenews.com.pk/print/765513-pkmt-organises-conference-on-impact-of-pandemic

کورونا میں سامراجی ہتھکنڈے اور کسان مزدوروں پر اثرات

26-12-2020:پریس ریلیز

پاکستان کسان مزدور تحریک (پی کے ایم ٹی) نے 26 دسمبر، 2020 کو کورونا وباء کو مدنظر رکھتے ہوئے تیرہواں سالانہ اجلاس آن لائن منعقد کیا جس میں ملک بھر کے مختلف اضلاع سے پی کے ایم ٹی کے چھوٹے اور بے زمین کسان مزدوروں اور دیگر شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے ارکان نے شرکت کی۔

ڈاکٹر عذرا طلعت سعید، روٹس فار ایکوٹی نے عالمی اور ملکی سطح پر کورونا کے اثرات پر بات کرتے ہوئے کہا کہ عالمی سرمایہ دارانہ نظام ہی کورونا وباء کا ذمہ دار ہے۔ ابھی ہم ایک وباء سے نہیں لڑپارہے اور دنیا بھر کے سائنسدانوں کی پیشنگوئی ہے کہ اب اس طرح کی کئی وبائیں آئیں گی کیونکہ سرمایہ دارانہ ہوس نے جنگلوں کو ختم کیا ہے اور یہ وبائیں زیادہ تر وہیں پائی جاتی ہیں۔ جنگلات کی کٹائی کے نتیجے میں اب یہ وبائیں انسانی آبادیوں میں جانوروں کے زریعے پھیل رہی ہیں۔

اس بحران نے اب دیگر بحرانوں کو جنم دیا ہے جس میں اقتصادی بحران مزدور کسان کے لیے وباء سے زیادہ سنگین صورتحال پیدا کررہا ہے۔ یہ وہ ہتھکنڈہ ہے جو اجارہ داری کی بنیاد پر سرمایہ داری کو بھاری بھرکم منافع کمانے کے لیے مواقع فراہم کر رہا ہے جبکہ مزدوروں کو اس وباء، بیروزگاری اور بھوک کے اندھے کنویں میں دھکیل دیا گیا ہے۔ اب ہماری سرمایہ داروں کی غلام ریاستیں اس وباء کو روکنے اور عوامی ضروریات پوری کرنے کے لیے درکار مالی، مادی اور انسانی وسائل استعمال کرنے کے لیے اپنا اختیاراستعمال کرنے سے بھی قاصر ہیں۔ عالمی سطح پر امیر سرمایہ دار ممالک اپنی دولت اور ٹیکنالوجی استعمال کرتے ہوئے کورونا کے خلاف ویکسین تیار اور ترسیل کرکے بے تحاشہ منافع کمانے میں کامیاب نظر آرہے ہیں۔ سرمایہ دارانہ نظام دعویٰ کرتا ہے کہ اس نظام میں سب کو یکساں رسائی حاصل ہوتی ہے لیکن کورونا ویکسین سے اس نظام کا یہ مکروہ فریب بھی کھل کر سامنے آگیا ہے کیونکہ یہ نظام طبقات پر مبنی ہے۔ جو زیادہ سے زیادہ دولت رکھتا ہے سہولیات بھی سب سے پہلے اسے ہی میسر آتی ہیں۔ Continue reading

ڈؤنلڈ ٹرمپ،بس اب اور نہیں! پاکستان کسان مزدور تحریک مرکزی رابطہ کار الطاف حسین

  !ڈونلڈ ٹرمپ، بس اب اور نہیں

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کہتے ہیں کہ ’’آپ نے ہمیں ڈبل کراس کیا۔ ہم نے آپ کو 33 ارب ڈالر دیے۔ آپ نے ہمارا کام نہیں کیا‘‘۔ جبکہ ہماری حکومت کہتی ہے کہ پاکستان کو 15 ارب ڈالر ملے ہیں اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں نقصان 110 ارب ڈالر کا ہوا ہے۔ جب سے پاکستان بنا ہے مجموعی طور پر امریکہ نے ہمیں نقصان ہی دیا ہے۔ لیکن ایک کسان ہونے کے ناتے میں آج زراعت پر پڑنے والے اثرات پر بات کروں گا، 2008 سے 2011 تک ہونے والے نقصانات کی بات کروں گا۔

آپ کے علم میں ہے کہ مالاکنڈ ڈویژن کے اضلاع لوئر دیر، اپر دیر، شانگلہ، سوات اور ضلع بونیر میں آڑو، خوبانی، آلوبخارا، گندم، مکئی، چاول، پیاز، ٹماٹر بڑے پیمانے پر کاشت ہوتے ہیں جبکہ چھوٹے پیمانے پر دیگر کئی سبزیاں اور میوہ جات بھی کاشت کیے جاتے ہیں۔ دہشت گردی کے خلاف جاری جنگ کی وجہ سے مالاکنڈ ڈویژن کے کئی اضلاع کے کو عوام کو اپنا گھر، تیار فصلیں اور باغات چھوڑ کر اندرون ملک نکل مکانی کرنی پڑی اور وہ آئی ڈی پیز بن گئے۔ میرا اپنا آلو بخارے کا باغ ہے جس سے اٹھارہ لاکھ روپے آمدنی ہوتی ہے۔ اس وقت ہماری ساری پیداوار ضائع ہوئی اور اربوں روپوں کا نقصان ہوا۔ اور اب ہمارے باغات پانی نہ ملنے کی وجہ سے سوکھ رہے ہیں۔ ہمارے علاقوں میں کرفیو لگا رہتا تھا جس کی وجہ سے ہم اپنی پیداوار فروخت نہیں کرسکتے تھے۔ آئی ڈی پیز بن کر ہمارے لوگوں نے پانچ سے چھ مہینے اسکولوں، حجروں میں رہ کر مصیبتیں اٹھائیں۔ نہ وقت پر کھانا، نہ وقت پر سونا، ہمارے لوگ ذہنی مریض بن گئے۔ جب واپس آئے تو کسی کا باپ لاپتہ، کسی کا بھائی اور بیٹا لاپتہ۔ گھر برباد، فصلیں برباد، باغات برباد، مویشی مرگئے۔ آئی ڈی پیز بن کر بے سروسامانی تو تھی ہی گھر پہنچ کر بھی بے سروسامانی کا عالم تھا۔ جناب ڈونلڈ ٹرمپ ہم نے یہ تمام مصیبتیں اٹھائیں اور آپ کہتے ہیں کہ ہم نے کچھ نہیں کیا۔ ہم برباد ہوگئے۔ آپ نے ہمیں تباہ کیا۔ اللہ آپ کو برباد کرے۔

ہمارے کسان مال مویشی پالتے ہیں تاکہ دوھ حاصل کرسکیں یا انہیں پال کر فروخت کرسکیں۔ نقل مکانی کے وقت ہم نے سوچا کہ کچھ لوگ مویشیوں کو چارہ پانی دینے کے لیے وہیں چھوڑدیں لیکن یہ خوف بھی تھا کہ کہیں طالبان انہیں قتل نہ کردیں۔ مجبوراً تمام لوگ وہاں سے نکل گئے اور ہمارے مویشی پانی اور چارہ نہ ملنے کی وجہ سے مرگئے۔ میں یہاں صرف اپنے ایک دوست کی بات کروں گا جس نے دو گائے پال رکھی تھیں جس کے بچے بھی تھے لیکن جب وہ واپس آیا تو اس کے جانور مرچکے تھے۔ ایک گائے کی قیمت ایک لاکھ دس ہزار تھی، اور وہ جانور کیسے تڑپ تڑپ کر مرے ہوں گے، کیا یہ ظلم نہیں؟ کیا یہ انسانیت ہے؟

اس دوران تعلیمی ادارے بند رہے۔ بچے تعلیم سے محروم رہے۔ اسکول بارود سے اڑا دیے گئے جو سات سالوں میں دوبارہ تعمیر ہوئے اور اقوام متحدہ میں امریکہ کی مندوب خاتون کہتی ہیں کہ ’’امریکہ کے لوگ کہتے ہیں کہ ہمارا پیسہ آپ نے جنگجوؤں کو کھلایا‘‘۔ بس کریں اب اور جنگجوؤں کو نہ کھلائیں۔ ڈونلڈ ٹرمپ آپ کہتے ہیں کہ ہم نے ہمیں ڈبل کراس کیا۔ لیکن میں کہتا ہوں کہ آپ نے ہمیں تباہ کیا۔ بس اب اور نہیں!